بِسمِ اللہِ الرَّحمٰنِ الرَّحِيم

24-July-2019

نوازشریف کی صحت کا مقدمہ عوام کی عدالت میں رکھنا چاہتی ہوں۔ مریم نواز

115 Views 0 1 مہینہ
نوازشریف کی صحت کا مقدمہ عوام کی عدالت میں رکھنا چاہتی ہوں۔ مریم نواز
Posted at 22 جون-2019

لاہور۔ نوازشریف اور مریم نواز کو پانامہ کیس میں سزا ہوئی تو وہ کچھ عرصہ پردہ سیاست سے غائب رہیں۔ اب آہستہ آہستہ دوبارہ سیاست میں فعال ہو رہی ہیں۔ مسلم لیگ میں بڑی تبدیلیاں کی گئیں تو انہیں نائب صدر کے عہدے پر فائز کیا گیا۔ واقفان حال کا کہنا ہے کہ مسلم لیگ میں اصل فیصلہ سازی کا اختیار تو نوازشریف کے پاس ہی نہیں مگر وہ اپنے تمام احکامات مریم نوازشریف کے ذریعے آگے بڑھانا چاہتے ہیں۔

مسلم نواز بھی اپنے والد کا بیانیہ ووٹ کو عزت دو کو لیکر آگے چل رہی ہیں۔ وزیراعظم عمران خان کی جانب سے این آر او مانگنے پر مریم نواز کا شدید ردعمل سامنے آیا ہے۔ ان کا کہنا ہے کہ نہ یہ مصر ہے نہ ہم میاں نواز شریف کو مرسی بننے دیں گے۔ جعلی حکومت سے ریلیف مانگ رہی ہوں نہ وہ دے سکتے ہیں۔ جو خود محتاج ہو وہ کیا ریلیف دے گا۔

Courtesy Dunya

نوازشریف کو تیسرا ہارٹ اٹیک اڈیالہ جیل میں ہوا

انہوں نے کہا کہ میرے نزدیک میثاق معیشت مذاق معیشت سے زیادہ کچھ نہیں ہے۔انہوں نے ایک پریس کانفرنس میں خطاب کرتے ہوئے کہا کہ نوازشریف کی صحت کا مقدمہ عوام کی عدالت میں رکھنا چاہتی ہوں۔ اب تک کچھ حقائق ایسے ہیں جو عوام کے سامنے نہیں آ سکے۔ نوازشریف کو تیسرا ہارٹ اٹیک اڈیالہ جیل میں ہوا۔ اس ہارٹ اٹیک سے مجھے لاعلم رکھا گیا۔

میاں صاحب نے ہسپتال جانے سے صاف انکار کر دیا

نوازشریف کو دل کی تکلیف پندرہ سال پرانی ہے۔ ان کی طبیعت خراب ہوئی تو سپرنٹنڈنٹ آفس میں بلایا گیا، وہاں گئی تو کچھ کارڈیالوجسٹ موجود تھے۔ وہاں موجود افراد نے کہا کہ میاں صاحب کی طبیعت خراب ہے۔ انہیں کہیں کہ وہ ہسپتال چلے جائیں۔ مریم نواز کا کہنا ہے کہ میاں صاحب نے جیل سے ہسپتال جانے سے صاف انکار کر دیا۔ ان کے ذاتی معالج کو ہنگامی طور پر لاہور سے بلوایا گیا۔

ڈاکٹر عدنان کی درخواست کے باوجود نواز شریف کا ڈسچارج سرٹیفکیٹ نہیں دیا گیا

ذاتی معالج کو بھی کچھ نہیں بتایا گیا۔ میاں صاحب نے جواب دیا کہ مریم کو اکیلا چھوڑ کر ہسپتال نہیں جا سکتا۔ ان کا کیا علاج ہوا میرے علم میں نہیں۔ ڈاکٹر عدنان کی درخواست کے باوجود نواز شریف کا ڈسچارج سرٹیفکیٹ کسی کو نہیں دیا گیا۔ البتہ جیل واپسی پر نوازشریف کو ادویات اور ڈاکٹر کی سہولت دے دی گئی۔ ان کی دل کی تین سرجریز ہو چکی ہیں۔

انہیں ایک اور بائی پاس کی ضرورت ہے

میرے بار بار پوچھنے کے باوجود دل کا دورہ پڑنے کی بات چھپائی گئی۔ ان کی ایک شریان 90 فیصد بند ہے۔ انہیں ایک اور بائی پاس کی ضرورت ہے۔ مریم نواز نے مزید کہا کہ نوازشریف کا بائی پاس ان کی وزارت عظمٰی کے دوران کیا گیا۔ انہیں کڈنی کی سٹیج تھری کا مسئلہ ہے۔

ایک ڈاکٹر نے تو ہاتھ جوڑے کہ ہم نوازشریف کا کیس نہیں لے سکتے۔ ان کے دل میں 7 اسٹنٹ ہیں مزید کی گنجائش نہیں۔ نوازشریف کی ملاقاتوں پر بھی پابندی عائد کر دی گئی ہے۔ ان کا پاکستان میں علاج ممکن ہے مگر ڈاکٹرز دباؤ میں ہیں۔

متعلقہ خبریں

لاہور میں 19 سالہ ملازمہ کا بے رحمی…

لاہور کے علاقہ ماڈل ٹاؤن سے اغواء ہونے والی 19 سالہ گھریلو ملازمہ بازیاب نہ کرائی جا سکی…

9 گھنٹے

جیل سے اے سی، ٹی وی ہٹانے کی…

مسلم لیگ ن کے صدر شہباز شریف کا کہنا ہے کہ وزیراعظم عمران خان نے امریکہ میں اتحاد…

10 گھنٹے
وزیراعظم عمران خان کا کیپٹل ارینا ون میں امریکی تاریخ کا سب سے بڑا جلسہ

وعدہ خلافی کرنے پر لڑکی نے لڑکے کا…

لاہور کے قریب رائے ونڈ میں ایک خاتون نے شادی سے انکار پر نوجوان کو گولیاں مار دی…

13 گھنٹے

گٹر سے روٹی تلاش کرنے والے لوگ

کچھ لوگ گٹر کو صاف خرکے اپنا اور اپنے بچوں کے لیے حلال رزق تلاش کرتے ہیں لیکن…

17 گھنٹے

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے