بِسمِ اللہِ الرَّحمٰنِ الرَّحِيم

22-July-2019

صدارتی نظام کی افواہیں مسترد کرتا ہوں۔ وزیراعظم کی سینئر صحافیوں سے گفتگو

283 Views 0 3 مہینے
صدارتی نظام کی افواہیں مسترد کرتا ہوں۔ وزیراعظم کی سینئر صحافیوں سے گفتگو
Posted at 3 مئی-2019

اسلام آباد۔ سابق صدر آصف علی زرداری اور کئی دیگر سیاسی رہنماؤں کی جانب سے اٹھارویں ترمیم کے خاتمے اور ملک کو صدارتی نظام کی طرف لے جانے کی باتیں کافی عرصے سے کی جا رہی ہیں۔ اب کئی دیگر سیاست دان بھی اس دوڑ میں شریک ہو گئے ہیں۔ اب اس پر سوشل میڈیا اور ٹی وی چینلز پر باقاعدہ بحث شروع ہو چکی ہے۔

ایک دور میں وزیراعظم عمران خان وفاقی کابینہ 16 افراد پر مشتمل ہونے کی باتیں کرتے تھے مگر اب وفاقی کابینہ 47 افراد پر مشتمل ہے۔ ان میں سے صرف 16 غیر منتخب یعنی ٹیکنوکریٹس پر مشتمل ہے۔ غیرمنتخب افراد کی تھوک کے حساب سے شمولیت پر کئی سیاسی رہنماؤں کی جانب سے سخت تنقید سامنے آئی ہے۔

وفاقی کابینہ میں مزید تبدیلیاں ہوں گی

آج سینئر صحافیوں سے ملاقات میں انہوں نے بتایا کہ وفاقی کابینہ میں مزید تبدیلیاں ہوں گی جو وزرا کارکردگی دکھائیں گے وہی کابینہ کا حصہ رہیں گے۔ اچھے اور قابل لوگ جہاں سے بھی ملیں گے انہیں اپنی ٹیم میں شامل کروں گا۔ غیر منتخب افراد کی کابینہ میں شمولیت سے متعلق ایک سوال کے جواب میں وزیراعظم نے کہا کہ میں نے قوم کو کارکردگی دکھانی ہے۔

جہاں ماہر لوگ نہ ہوں گے وہاں ٹیکنیکل ٹیم لا رہا ہوں

اس بات سے کوئی فرق نہیں پڑتا کہ کوئی منتخب ہے یا غیر منتخب جہاں ماہر لوگ نہ ہوں گے وہاں ٹیکنیکل ٹیم لا رہا ہوں۔ اپنی ٹیم میں تجربہ کار لوگوں کو استعمال کر رہا ہوں۔ اسد عمر کے حوالے سے ایک سوال کے جواب میں کہا کہ وہ پی ٹی آئی کا قیمتی اثاثہ ہیں۔ وہ جلد ہی وفاقی کابینہ کا حصہ ہوں گے۔

پیر کو قومی اسمبلی کے اجلاس میں شرکت کروں گا

قومی اسمبلی کے اجلاس میں شرکت نہ کرنے کے حوالے سے بتایا کہ پیر کو قومی اسمبلی کے اجلاس میں شرکت کروں گا۔ انہوں نے مزید کہا کہ ماضی کے حکمرانوں کی طرح مرضی کے فیصلے کرانے کیلئے کوئی دباؤ نہیں ڈالا جاتا۔ ملک میں میرٹ کی دھجیاں اڑائیں گئیں، موجودہ حالات اسی کا نتیجہ ہیں۔

عوامی مفاد میں اپوزیشن سے بھی رائے لیں گے

عوامی مفاد میں قانونی سازی کیلئے اپوزیشن سے بھی رائے لیں گے۔ خواتین کی ترقی کیلئے اہم قانون بنا رہے ہیں۔ نئے قوانین سے عوام کو سستا اور فوری انصاف دلانا مقصود ہے۔انہوں نے کہا کہ اپوزیشن این آر او کیلئے دباؤ ڈال رہی ہے لیکن میں قوم کو بتا دینا چاہتا ہوں کہ این آر او ہرگز کسی کو نہیں ملے گا۔

عدالتوں اور نیب کی آزادی پر یقین رکھتے ہیں۔ انٹیلی جنس رپورٹ کے مطابق پی ٹی ایم کے کچھ افراد کو بیرون ملک سے پیسے ملے ہیں۔ صدارتی نظام کے حوالے سے کوئی سوچ ہی موجود نہیں۔ ان حوالے سے اٹھنے والی تمام افواہوں کو مسترد کرتا ہوں۔

متعلقہ خبریں

طالبان کو جنگ بندی پر راضی کرنے کیلئے…

اسلام آباد۔ اگلے سال امریکہ کا صدارتی انتخاب ہونے جا رہاہے۔ صدر ٹرمپ دوسری ٹرم کیلئے امریکی صدر…

6 گھنٹے
طالبان کو جنگ بندی پر راضی کرنے کیلئے امریکہ پاکستان کے کردار کا خواہش مند

واٹس ایب پر تفتیشی پولیس افسران کو ہیبت…

لاہور۔ نیب لاہور پنجاب پولیس کیخلاف گجرات، ساہیوال اور شیخوپورہ ریجنز میں حکومتی خزانے کو اربوں روپے کا…

7 گھنٹے
واٹس ایب پر تفتیشی پولیس افسران کو ہیبت ناک نتائج کی دھمکیوں کا انکشاف

مون سون بارشوں کی وجہ سے دریاؤں کے…

مظفر آباد۔ مون سون کا آغاز ہوتے ہی آزاد کشمیر کے دریاؤں میں ابال آنا شروع ہو جاتا…

7 گھنٹے
مون سون بارشوں کی وجہ سے دریاؤں کے کنارے رہنے والے کشمیری رہائشیوں کیلئے وا رننگ

چیئرمین سینیٹ نہ بنایا تھا اور نہ اب…

اسلام آباد۔ سابق صدر آصف زرداری کے بارے میں مشہور ہے کہ وہ زبان کے پکے ہیں۔ شاید…

8 گھنٹے
چیئرمین سینیٹ نہ بنایا تھا اور نہ اب اتار رہے ہیں

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے