بِسمِ اللہِ الرَّحمٰنِ الرَّحِيم

22-July-2019

ہیپاٹائٹس پروگرام پنجاب کے سربراہ ڈاکٹر خالد محمود کا انکشاف

302 Views 0 3 مہینے
Posted at 30 اپریل-2019

لاہور۔ پاکستان ٹیم کے ورلڈکپ روانگی سے ایک روز پہلے کرکٹ بورڈ نے ایک سنسنی خیز خبر دی کہ کرکٹر شاداب خان کے خون میں ایک خطرناک وائرس کا انکشاف ہوا ہے۔ وہ وائرس کس بیماری کا ہے۔ اس حوالے سے کرکٹ بورڈ نے ابھی تک عوام کو لاعلم رکھا ہے۔ چیف سلیکٹر انضمام الحق نے بھی پریس کانفرنس میں بیماری کا نام نہیں بتایا۔ خیر یہ تو ایک قانونی اور اخلاقی پابندی بھی ہے کہ کسی کرکٹر کی بیماری کے حوالے سے آگاہ نہیں کیا جا سکتا۔ بورڈ حکام، ٹیم مینجمنٹ اور ذرائع آف کیمرہ شاداب خان کو ”ہیپٹاٹائٹس سی“ کا مریض قرار دے چکے ہیں۔ کپتان سرفراز احمد اور کوچ مکی آرتھر بارہا مرتبہ امید ظاہر کر چکے ہیں کہ شاداب خان ورلڈکپ کھیلے گا۔


اس بیماری کی ویکسینیشن تین ماہ میں مکمل ہوتی ہے

یہی سوال لے کر ہم نے پنجاب ہیپاٹائٹس پروگرام کے سربراہ ڈاکٹر خالد محمود سے تفصیلی بات کی۔ ڈاکٹر خالد محمود نے واضح کیا کہ دنیا میں کہیں سے بھی علاج کرا لیں ہیپاٹائٹس کو مکمل ختم کرنے میں کم از کم تین ماہ کا عرصہ درکار ہوتا ہے۔ دراصل اس بیماری کی ویکسینیشن تین ماہ میں ہی مکمل ہوتی ہے۔ اگر ایک یا دو ماہ بعد علاج روک دیا جائے تو وائرس پھر حملہ کرتا ہے اور یہ حملہ زیادہ خطرناک اور جان لیوا بھی ہو سکتا ہے۔ اس طرح سے ایک بات واضح ہے کہ شاداب خان کے خون سے جو وائرس ملا یا تو وہ ہیپاٹائٹس سی نہیں اور اگر ایسا ہے تو لیگ اسپنر ورلڈکیلئے دستیاب نہیں ہو سکتے۔

متعلقہ خبریں

طالبان کو جنگ بندی پر راضی کرنے کیلئے…

اسلام آباد۔ اگلے سال امریکہ کا صدارتی انتخاب ہونے جا رہاہے۔ صدر ٹرمپ دوسری ٹرم کیلئے امریکی صدر…

6 گھنٹے
طالبان کو جنگ بندی پر راضی کرنے کیلئے امریکہ پاکستان کے کردار کا خواہش مند

مون سون بارشوں کی وجہ سے دریاؤں کے…

مظفر آباد۔ مون سون کا آغاز ہوتے ہی آزاد کشمیر کے دریاؤں میں ابال آنا شروع ہو جاتا…

7 گھنٹے
مون سون بارشوں کی وجہ سے دریاؤں کے کنارے رہنے والے کشمیری رہائشیوں کیلئے وا رننگ

چیئرمین سینیٹ نہ بنایا تھا اور نہ اب…

اسلام آباد۔ سابق صدر آصف زرداری کے بارے میں مشہور ہے کہ وہ زبان کے پکے ہیں۔ شاید…

8 گھنٹے
چیئرمین سینیٹ نہ بنایا تھا اور نہ اب اتار رہے ہیں

پی سی بی اور سری لنکا کرکٹ بورڈ…

لاہور۔ 2007ء میں سری لنکا کے دورہ پاکستان کے آخری لاہور ٹیسٹ میں قذافی سٹیڈیم آتے ہوئے سری…

9 گھنٹے
پی سی بی اور سری لنکا کرکٹ بورڈ کے درمیان رابطہ

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے