بِسمِ اللہِ الرَّحمٰنِ الرَّحِيم

20-May-2019

لاہور میں اب تک کتنے دھماکے ہوئے

69 Views 0 2 ہفتے
لاہور میں اب تک کتنے دھماکے ہوئے
Posted at 8 مئی-2019

لاہور۔ زندہ دلان لاہور کی مہمان نوازی تو دنیا بھر میں مشہور ہے ہی مگر بدقسمتی سے دہشت گردی کیخلاف جنگ میں لاہوریوں نے نہ صرف مالی بلکہ بہت زیادہ جانی نقصان بھی اٹھایا ہے۔ البتہ سیکیورٹی فورسز اور پولیس فورسز نے 2017ء کے بعد کافی تک ایسے واقعات پر قابو پا لیا تھا مگر آج داتا دربار کے نزدیک ایلیٹ فورس کی وین کو خودکش بم دھماکے میں پھر نشانہ بنایا گیا۔

اس افسوس ناک سانحہ میں 5 افراد جاں بحق اور دو درجن سے زائد زخمی ہو گئے۔ یہ دہشت گردی کا پہلا واقعہ نہیں جب شہر لاہور لرز اٹھا۔ بم دھماکوں کی یہ سیریل 2006 میں شروع ہوئی اور ابھی تک جاری ہے۔ باغات کا شہر کب کب لہو میں نہا گیا۔ 2008ء 10 جنوری کو لاہور ہائیکورٹ کے سامنے جی پی او چوک میں خودکش دھماکے میں 24 افراد زندگی کی بازی ہار گئے اور 73 افراد زخمی ہوئے۔

اسی سال 4 مارچ کو دو خودکش بمباروں نے مال روڈ پر واقع نیوی وار کالج پر خود کو اڑا لیا جس میں نیوی اہلکار بھی لقمہ اجل بن گئے۔ 11 مارچ کو ایف آئی اے کی بلڈنگ پر خودکش حملہ کیا گیا۔ اسے لاہور کی تاریخ کے خطرناک حملوں میں سے ایک قرار دیا جاتا ہے۔ اسی دن ماڈل ٹاؤن میں ایک اشتہاری کمپنی پر بھی خودکش دھماکہ کیا گیا۔ اس روز مجموعی طور پر 26 افراد جاں بحق ہوئے۔

دو ہزار نو میں سری لنکن کرکٹ ٹیم کے کانوائے کو نشانہ بنایا گیا

دو ہزار نو میں ہونیوالی دہشت گردی کی کارروائی ملک میں سیاہ باب کے طور پر ہمیشہ یاد رکھی جائے گی۔ اس دن سری لنکن کرکٹ ٹیم کے کانوائے کو نشانہ بنایا گیا۔ حملے میں تمام مہمان کھلاڑی تو محفوظ رہے لیکن پاکستان میں کھیل کے میدان اجڑ گئے۔ 30 مارچ کو دس دہشت گردوں نے مناواں پولیس اسٹیشن پر دھاوا بول دیا۔

دہشت گردی کی اس کارروائی میں 8 پولیس اہلکار لقمہ اجل بن گئے اور 93 افراد زخمی ہوئے۔ 27 مئی کو دہشت گردوں نے بارود سے بھری گاڑی آئی ایس آئی ہیڈ کوارٹر کی عمارت سے جا ٹکرائی۔ اس خودکش حملے میں 27 افراد جان کی بازی ہار گئے اور 326 افراد زخمی ہوئے۔ 12 جون کو جامعہ نعیمیہ میں نماز جمعہ کے فوری بعد خودکش بمبار نے مذہبی سکالر سرفراز احمد نعیمی کو نشانہ بنایا

۔ 15 اکتوبر کو مناواں پولیس اسٹیشن، ایف آئی اے بلڈنگ اور بیدیاں روڈ پر واقع پولیس ٹریننگ سکول پر ایک ہی وقت پر نشانہ بنایا گیا جس میں 19 افراد لقمہ اجل بنے اور 41 زخمی ہوئے۔ دو ہزار نو کے اختتام پر مون مارکیٹ میں تیس سیکنڈ کے فرق سے دو زوردار دھماکے ہوئے جس میں 70 سے زائد افراد نشانہ بنے اور 150 زخمی ہوئے۔

اس کے علاوہ 2014ء میں واہگلہ بارڈر پر دہشت گردی کا افسوس ناک واقعہ پیش آیا

دو ہزار دس میں 12 مارچ کو دو خودکش بمباروں نے خود کو آر اے بازار میں اڑا دیا اور 45 افراد لقمہ اجل بنے۔ 28 مئی کو گڑھو شاہو اور ماڈل ٹاؤن میں مرزائیوں کی عبادت گاہوں پر دہشت گردوں نے حملہ کر دیا۔ اس حملے میں 95 افراد مارے اور 108 زخمی ہوئے۔ یکم جولائی کو داتا دربار میں دو خودکش بمباروں نے خود کو اڑا لیا جس میں 42 افراد زندگی کی بازی ہار گئے اور 180 سے زائد افراد زخمی ہوئے۔

اسی طرح 2017ء میں مال روڈ اور فیروزپور روڈ پرخودکش دھماکوں میں شہادتیں ہوئیں

یکم ستمبر کو کربلا گامے شاہ کے قریب یوم شہادت علی کے جلوس میں خودکش بمبار نے خود کو اڑا لیا۔ اس سانحہ میں 30 افراد جاں بحق ہو گئے اور 250 سے زائد زخمی ہوئے۔ اس کے علاوہ 2014ء میں واہگلہ بارڈر پر دہشت گردی کا افسوس ناک واقعہ پیش آیا۔ 2016ء گلشن اقبال پارک میں جھولے کے قریب انتہائی افسوناک واقعہ پیش کیا جس میں درجنوں افراد جاں بحق ہو گئے۔

اسی طرح 2017ء میں مال روڈ اور فیروزپور روڈ پرخودکش دھماکوں میں شہادتیں ہوئیں۔

متعلقہ خبریں

عافیہ کا مقدمہ بیرون ملک قید پاکستانیوں کے…

اسلام آباد۔ امریکی جیل میں قید پاکستان کی بیٹی عافیہ صدیقی کو پاکستانی لانے کے بارے میں طویل…

9 گھنٹے
عافیہ صدیقی کا مقدمہ بیرون ملک قید پاکستانیوں کے کیس سے منسلک کرنے کا حکم

اسلام آباد ہائیکورٹ سے طبی بنیادوں پر ریلیف…

اسلام آباد۔ سابق وزیراعظم نواز شریف کے حلیف انہیں قسمت کا دھنی اور لاڈلہ بھی کہتے ہیں۔ ہر…

10 گھنٹے
اسلام آباد ہائیکورٹ سے طبی بنیادوں پر ریلیف کی استدعا

ایک اور حوا کی بیٹی جان سے گئی

بدین۔ فیس بک اور انٹرنیٹ کی ایجاد نے جہاں انسانی زندگی میں بے پناہ آسانیاں پیدا کی ہیں…

11 گھنٹے
ایک اور حوا کی بیٹی جان سے گئی

بے اولاد جوڑے نے ہسپتال سے نومولود بچہ…

لاہور کی سی آئی اے کوتوالی پولیس نے لیڈی ویلنگٹن اسپتال سے دو روز قبل اغوا ہونے والے…

1 دن

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے