بِسمِ اللہِ الرَّحمٰنِ الرَّحِيم

24-July-2019

ایف آئی اے افسران اور پیشہ ور لڑکیوں کا گٹھ جوڑ پکڑا گیا

241 Views 0 2 مہینے
ایف آئی اے افسران اور پیشہ ور لڑکیوں کا گٹھ جوڑ پکڑا گیا
Posted at 22 مئی-2019

لاہور۔ اس ملک کا کیا کریں گے جہاں پر ایک ادارہ جو کہ اس چیز کا ذمہ دار ہے کہ ہراساں کرنیوالوں کیخلاف کارروائی کرے۔ اگر اس ادارے کے عہدیدار پیشہ ور خواتین کی مدد سے خود معصوم شہریوں کا شکار کرنے لگے تو آپ کہاں جائیں؟ آپ سمجھ رہے ہوں گے کہ یہ میڈیا کی محض ایک خبر ہے۔ ایسا بالکل بھی نہیں،

یہ خبر خود ایف آئی اے نے پریس ریلیز کی صورت میں دی ہے اور اس بات کا اعتراف کیا ہے کہ ان کے کچھ افسران ایسے گھناؤنے کاموں میں ملوث پائے گئے ہیں۔ اس لئے شہریوں کو خبردار کیا جاتا ہے کہ کسی کیخلاف بھی ہراساں کیس اعلٰی عہدیدار کی منظوری کے بغیر درج نہیں کیا جائیگا۔

ہراساں کیس اعلٰی عہدیدار کی منظوری کے بغیر درج نہیں کیا جائیگا

ایف آئی اے سائبر کرائم ونگ کے کچھ افسران کے گروہ میں ایسی پیشہ ور خواتین ہیں جو پہلے سوشل میڈیا پر دوستی کریںگی اوربعد میں ہراساں کرنے کا الزام لگاتی ہیں۔ آپ کہیں گے کہ شریف آدمی ایسی لڑکیوں کے جال میں پھنس کیوں جاتے ہیں تو اس کا سادہ سا جواب ہے ہراسمنٹ کا پیچیدہ قانون۔

آسان لفظوں میں جس سے جان پہچان نہیں سوشل میڈیا پر احتیاط برتے

اس قانون کے مطابق اگر کوئی دوسرے کی معلومات اکٹھی کرنا چاہے حتٰی کہ بلااجازت رابطہ کرے، جیسے سوشل میڈیا پر میسج کرنا، تو اسے تین ماہ قید یا 50 ہزار روپے جرمانہ یا دونوں سزائیں دی جا سکتی ہیں۔ یعنی اگر فیس بک پر آپ کی کسی لڑکی سے دوستی ہے تو وہ آپ کے کسی بھی میسج کو ہراسمنٹ قرار دے سکتی ہے۔

آسان لفظوں میں جس سے جان پہچان نہیں سوشل میڈیا پر احتیاط برتے۔ دوسرا قانون اس سے بھی سخت ہے جس میں اگر کوئی کسی کی تصویر، معلومات یا کوئی بھی چیز پوسٹ کرے۔ کسی کیخلاف مہم چلائے (جس میں جھوٹی یا سچی دونوں باتیں شامل ہیں) اسے ایک لاکھ سے ایک کروڑ جرمانہ چند ماہ سے 20 سال تک قید کی سزا دی جا سکتی ہے۔

ہراساں کیس میں بدنامی اس سے بھی بڑی پریشانی ہے اور یہ وہ نقطہ ہے جس پر ایف آئی اے معصوم شہریوں کو جال میں پھنساتے ہیں مگر اب ان کی نشاندہی ہو چکی ہے اس لئے خود ایف آئی اے نے ایک درخواست پر ہراساں کیس پر کارروائی کو روک دیا ہے۔ اگرچہ اس کا نقصان بھی ہو گا کہ اصل ملزم کیخلاف بھی اب تاخیر سے کارروائی ہو گی۔

متعلقہ خبریں

لاہور میں 19 سالہ ملازمہ کا بے رحمی…

لاہور کے علاقہ ماڈل ٹاؤن سے اغواء ہونے والی 19 سالہ گھریلو ملازمہ بازیاب نہ کرائی جا سکی…

9 گھنٹے

وعدہ خلافی کرنے پر لڑکی نے لڑکے کا…

لاہور کے قریب رائے ونڈ میں ایک خاتون نے شادی سے انکار پر نوجوان کو گولیاں مار دی…

13 گھنٹے

گٹر سے روٹی تلاش کرنے والے لوگ

کچھ لوگ گٹر کو صاف خرکے اپنا اور اپنے بچوں کے لیے حلال رزق تلاش کرتے ہیں لیکن…

16 گھنٹے

سینیٹ کا اجلاس شروع ہونے کے کچھ منٹوں…

اسلام آباد۔ سب سے بڑا قانون ساز ادارہ سینیٹ کا اجلاس آج شروع ہونے کے کچھ ہی دیر…

16 گھنٹے
سینیٹ کا اجلاس شروع ہونے کے کچھ منٹوں بعد ہی ملتوی

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے